Image Image Image Image Image Image Image Image Image Image
Scroll to top

Top

لڑکی کی نازیبا وڈیو بنانے پر پشاور کے لڑکے کو سزا

vulgar-video_thumb

پشاور کے ایک نوجوان لڑکے کو پڑوسی لڑکی کی نازیبا وڈیو بنانے پر آٹھ سال قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔

یہ خیبر پختونخواہ میں پیش آنے والا اپنی نوعیت کا واحد واقعہ ہے جس میں لڑکے کو کسی لڑکی کی بیہودہ تصاویر لینے یا وڈیو بنانے کی صورت میں سزا دی گئی ہو۔

تفصیلات کے مطابق کم عمر لڑکے نے پڑوسی لڑکی کی وڈیو بنائی تھی اور کچھ مہینوں سے اسے بلیک میل بھی کر رہا تھا۔ اس جرم میں اس کا ایک ساتھی بھی تھا جو اب بھی لاپتہ ہے اور پولیس اس کی گرفتاری کے لیے چھاپے مار رہی ہے۔

کئی مہینوں تک لڑکی کو بلیک میل کرنے اور اس کی بے عزتی کرنے کے بعد دونوں مجرموں نے اسے زیادہ نقصان پہنچانے کے لیے وڈیو مارکیٹ میں جاری کردی۔

خیبرپختونخواہ کے چائلڈ پروٹیکشن کمیشن نے کہا کہ ایسے قوانین کی عدم موجودگی کے باعث قبل ازیں عدالت میں معصوم لڑکیوں کی نازیبا وڈیوز اور تصاویر بنانے کے مقدمات نہیں سنے جاتے تھے یا سزا نہیں ملتی تھی۔ لیکن خصوصی قانون سازی کی وجہ سے اب تمام مجرموں کو جیل کی راہ دکھائی جائے گی۔

واضح رہے کہ نازیبا وڈیو بنانے یا تصاویر کھینچنے کا رحجان بہت تیزی سے بڑھ رہا ہے۔ نوجوان لڑکے اور لڑکیاں نجی لمحات کی نازیبا وڈیوز بنانے میں پہلے ہی شامل ہیں۔ یہ وڈیوز کبھی کبھار جان بوجھ کر ان کی جانب سے جاری کردی جاتی ہیں یا حادثاتی طور پر ناپسندیدہ ہاتھوں میں چلی جاتی ہیں، جس کا نتیجہ بہت سنگین نکلتا ہے۔

اس طرح کے کسی بھی معاملے میں پھنسنے والا فرد چائلڈ پروٹیکشن کمیشن تک رسائی حاصل کرسکتا ہے جو پہلے ہی خیبر پختونخواہ میں متعدد مقدمات کی پیروی کررہا ہے۔

بذریعہ بی بی سی اردو

Comments

  1. hazrT hussain

    istaraha ke video banana wale ko sazay moot de jay ta k aayenda koi or istaraha ka kaam na karee