Pakistani Team Wins Silver in Global Genetic Engineering Contest in USA

A moment of delight, pride and gratification as a Pakistani team won silver at International Genetically Engineered Machines (iGEM) competition. From trials to triumph, it was surely a journey for the team.


Read More: Pakistani Team Enters Global Genetic Engineering Contest in USA as Favorites


The team comprised of 12 students from different cities of Pakistan including Peshawar, Islamabad, Lahore, Attock, Mardan, Swabi, Khyber Agency, Nowshera, Charsadda, Multan and Faisalabad. CECOS University of Information Technology and Emerging Sciences Peshawar hosted the team of students. The competition was held in Boston, United States.

Dr Faisal Khan, The team’s supervisor and head of CECOS’s Biosciences lab, says;

The project will have a direct impact on fish farmers and will also help to keep the fish with good health for consumption by human beings.

Reporter Fish

The team built different circuits and sensors that can detect contamination in water. The sensor would change its color when it dredges up polluted water issuing a warning. “Reporter Fish” also has a digital sensor that will send a text-based warning message if arsenic is detected in water. The message cam be sent to people in the fishing industry.

Another Nomination

Apart from the silver medal, the team also gathered a nomination for Best Biosafety award. iGEM Peshawar posted on their Facebook page;

Boom! Silver it is!! ???IGEM Peshawar gets a silver medal this year in Pakistan’s second year here at the International Genetically Engineered Machine competition. The team also earned a nomination this year for the Best Biosafety Award. Lots to reflect on, lots of people to thank but for now it’s time to celebrate! #science #peshawar #pakistan.

Last year another team from Pakistan won bronze in same competition.

Via: Dawn


  • Maybe true

    Just curious, who won the gold?

  • انجینئرڈ مشینوں کا عالمی مقابلہ، پاکستانی طلباء نے چاندی کا تمغہ جیت لیا

    کراچی (نیوز ڈیسک) پاکستانی طلباء کی 12رکنی نوجوان ٹیم نے امریکی شہر بوسٹن میں جاری انجینئرڈ مشینوں کے سالانہ بین الاقوامی مقابلوں (آئی جی ای ایم) میں چاندی کا تمغہ جیت لیا ہے۔ بین الاقوامی مقابلے میں دنیا بھر سے 300 ٹیموں نے حصہ لیا، جس میں پاکستانی طلباء کی 6 رکنی ٹیم شریک ہوئی۔مقابلے میں حصہ لینے والے طلباء میں لاہور، اٹک، اسلام آباد، ملتان ، فیصل آباد، خیبر ایجنسی، چارسدہ ، پشاور، صوابی اور مردان کے طلباء شامل تھے ۔ ان طلباء نے مچھلی کے ذریعے پانی میں بھاری دھاتوں کا پتہ لگانے کا پراجیکٹ (رپورٹر فش) پیش کیا تھا۔ رپورٹر فش کے نام سے یہ پراجیکٹ ڈائریکٹوریٹ آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی خیبرپختونخوا اور نجی تعلیمی اداروں کے اشتراک سے تیار کیا گیا۔ پراجیکٹ کے تحت طلباء نے پانی میں بھاری دھاتوں کی موجودگی پر رنگ بدلنے والی مچھلی کا جینیٹک سرکٹ یعنی ڈی این اے تیار کیا، جس کی مدد سے پانی میں موجود بھاری دھات کی وجہ سے مچھلی کا رنگ بدل جائے گا جس سے مچھلی کے خریداروں کو مدد ملے گی۔ واضح رہے کہ انٹرنیشنل جینیٹیکلی انجینئرڈ مشینز (آئی جی ای ایم) میں یہ پاکستان کی دوسری نمائندگی ہے، جو دنیا کا سب سے بڑا سنتھیٹھک بائیولوجی مقابلہ ہے۔ گذشتہ سال بھی پاکستانی طلباء نے گاڑیوں میں گیسز معلوم کرنے کے لیے بائیو سنسر تیار کرکے مقابلے میں کانسی کا تمغہ جیتا تھا۔

  • Waqas Rabbani

    Great news, nice to see Pakistan united